فلک پہ چاند نہیں کوئی ابر پارہ نہیں

احمد ظفر

فلک پہ چاند نہیں کوئی ابر پارہ نہیں

احمد ظفر

MORE BYاحمد ظفر

    فلک پہ چاند نہیں کوئی ابر پارہ نہیں

    یہ کیسی رات ہے جس میں کوئی ستارہ نہیں

    یہ انکشاف ستاروں سے بھر گیا دامن

    کسی نے اتنا کہا جب کہ وہ ہمارا نہیں

    زمیں بھنور ہو جہاں آسماں سمندر ہو

    وہاں سفر کسی ساحل کا استعارہ نہیں

    میں مختلف ہوں زمانے سے اس لیے شاید

    کسی خیال کی گردش مجھے گوارہ نہیں

    خزاں کے موسم خاموش نے صدا دی ہے

    جمال دوست نے پھر بھی مجھے پکارا نہیں

    جو ریزہ ریزہ نہیں دل اسے نہیں کہتے

    کہیں نہ آئینہ اس کو جو پارہ پارہ نہیں

    میں زخم زخم سہی پھر بھی مسکرایا ہوں

    ظفرؔ بہ نام ظفر ہار کے بھی ہارا نہیں

    مأخذ :
    • کتاب : Nuquush (Pg. 533)
    • Author : Mohammad Tufail
    • مطبع : Idara-e-Frog-e-Urdu, Lahore (1985,Issue No. 132)
    • اشاعت : 1985,Issue No. 132
    • کتاب : Nuquush (Pg. 533)
    • Author : Mohammad Tufail
    • مطبع : Idara-e-Frog-e-Urdu, Lahore (1985,Issue No. 132)
    • اشاعت : 1985,Issue No. 132

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY