غیر کو منہ لگا کے دیکھ لیا

داغؔ دہلوی

غیر کو منہ لگا کے دیکھ لیا

داغؔ دہلوی

MORE BYداغؔ دہلوی

    غیر کو منہ لگا کے دیکھ لیا

    جھوٹ سچ آزما کے دیکھ لیا

    ان کے گھر داغؔ جا کے دیکھ لیا

    دل کے کہنے میں آ کے دیکھ لیا

    کتنی فرحت فزا تھی بوئے وفا

    اس نے دل کو جلا کے دیکھ لیا

    کبھی غش میں رہا شب وعدہ

    کبھی گردن اٹھا کے دیکھ لیا

    جنس دل ہے یہ وہ نہیں سودا

    ہر جگہ سے منگا کے دیکھ لیا

    لوگ کہتے ہیں چپ لگی ہے تجھے

    حال دل بھی سنا کے دیکھ لیا

    جاؤ بھی کیا کرو گے مہر و وفا

    بارہا آزما کے دیکھ لیا

    زخم دل میں نہیں ہے قطرۂ خوں

    خوب ہم نے دکھا کے دیکھ لیا

    ادھر آئینہ ہے ادھر دل ہے

    جس کو چاہا اٹھا کے دیکھ لیا

    ان کو خلوت سرا میں بے پردہ

    صاف میدان پا کے دیکھ لیا

    اس نے صبح شب وصال مجھے

    جاتے جاتے بھی آ کے دیکھ لیا

    تم کو ہے وصل غیر سے انکار

    اور جو ہم نے آ کے دیکھ لیا

    داغؔ نے خوب عاشقی کا مزا

    جل کے دیکھا جلا کے دیکھ لیا

    RECITATIONS

    جاوید نسیم

    جاوید نسیم

    جاوید نسیم

    Ger ko munh laga ke dekh liya جاوید نسیم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY