غم حیات کہانی ہے قصہ خواں ہوں میں

اختر انصاری

غم حیات کہانی ہے قصہ خواں ہوں میں

اختر انصاری

MORE BYاختر انصاری

    غم حیات کہانی ہے قصہ خواں ہوں میں

    دل ستم زدہ ہے رازداں ہوں میں

    زیادہ اس سے کوئی آج تک بتا نہ سکا

    کہ ایک نکتۂ ناقابل بیاں ہوں میں

    نظر کے سامنے کوندی تھی ایک بجلی سی

    مجھے بتاؤ خدارا کہ اب کہاں ہوں میں

    خزاں نے لوٹ لیا گلشن شباب مگر

    کسی بہار کے ارمان میں جواں ہوں میں

    یہ کہہ رہی ہے نظر کی غم آفریں جنبش

    کسی کے دل کی تباہی کی داستاں ہوں میں

    خزاں کہتی تھی میں شوخی بہاراں ہوں

    بہار کہتی ہے رنگینی خزاں ہوں میں

    شباب نام ہے اس جاں نواز لمحے کا

    جب آدمی کو یہ محسوس ہو جواں ہوں میں

    جہان درد و الم پوجتا ہے مجھ کو آہ

    تپش جبیں ہے لہو سجدہ آستاں ہوں میں

    وہ دن بھی تھے کہ میں جان شباب تھا اخترؔ

    اب اپنے عہد جوانی کی داستاں ہوں میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY