غریب ہم ہیں غریبوں کی بھی خوشی ہو جائے

ریاضؔ خیرآبادی

غریب ہم ہیں غریبوں کی بھی خوشی ہو جائے

ریاضؔ خیرآبادی

MORE BYریاضؔ خیرآبادی

    غریب ہم ہیں غریبوں کی بھی خوشی ہو جائے

    نظر حضور ادھر بھی کبھی کبھی ہو جائے

    غرور بھی جو کروں میں تو عاجزی ہو جائے

    خودی میں لطف وہ آئے کہ بے خودی ہو جائے

    غم فراق کی سختی وصال سے بدلے

    جو موت آئے مجھے میری زندگی ہو جائے

    مری شراب کی کیا قدر تجھ کو اے واعظ

    جسے میں پی کے دعا دوں وہ جنتی ہو جائے

    میں اس نگاہ کے صدقے یہ ہو اثر جس میں

    کہ دل میں درد بھی اٹھے تو گدگدی ہو جائے

    ستم بھی ہو تو ستم میں وہ لطف پنہاں ہو

    کہ نالہ آ کے مرے ہونٹھ پر ہنسی ہو جائے

    نہ پوچھو بادہ گساران بزم وارثؔ کی

    یہ دیکھ لیں سوئے واعظ تو وہ ولی ہو جائے

    ہٹا رہا ہوں شب و روز اس لیے خود کو

    فنا کے راز سے مجھ کو بھی آگہی ہو جائے

    تری نگاہ کرم سے عجب نہیں وارث

    ریاضؔ سا سگ دنیا بھی آدمی ہو جائے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY