گھر کا رستہ بھی ملا تھا شاید

ادا جعفری

گھر کا رستہ بھی ملا تھا شاید

ادا جعفری

MORE BY ادا جعفری

    گھر کا رستہ بھی ملا تھا شاید

    راہ میں سنگ وفا تھا شاید

    اس قدر تیز ہوا کے جھونکے

    شاخ پر پھول کھلا تھا شاید

    جس کی باتوں کے فسانے لکھے

    اس نے تو کچھ نہ کہا تھا شاید

    لوگ بے مہر نہ ہوتے ہوں گے

    وہم سا دل کو ہوا تھا شاید

    تجھ کو بھولے تو دعا تک بھولے

    اور وہی وقت دعا تھا شاید

    خون دل میں تو ڈبویا تھا قلم

    اور پھر کچھ نہ لکھا تھا شاید

    دل کا جو رنگ ہے یہ رنگ اداؔ

    پہلے آنکھوں میں رچا تھا شاید

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY