گلہ کس سے کریں اغیار دل آزار کتنے ہیں

ابو المجاہد زاہد

گلہ کس سے کریں اغیار دل آزار کتنے ہیں

ابو المجاہد زاہد

MORE BY ابو المجاہد زاہد

    گلہ کس سے کریں اغیار دل آزار کتنے ہیں

    ہمیں معلوم ہے احباب بھی غم خوار کتنے ہیں

    سکت باقی نہیں ہے قم باذن للہ کہنے کی

    مسیحا بھی ہمارے دور کے بیمار کتنے ہیں

    یہ سوچو کیسی راہوں سے گزر کر میں یہاں پہنچا

    یہ مت دیکھو مرے دامن میں الجھے خار کتنے ہیں

    جو سوتے ہیں نہیں کچھ ذکر ان کا وہ تو سوتے ہیں

    مگر جو جاگتے ہیں ان میں بھی بیدار کتنے ہیں

    بہت ہیں مدعی سچ کی طرف داری کے اے زاہدؔ

    مگر جو جھوٹ سے ہیں بر سر پیکار کتنے ہیں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY