گو جام مرا زہر سے لبریز بہت ہے

کرشن ادیب

گو جام مرا زہر سے لبریز بہت ہے

کرشن ادیب

MORE BYکرشن ادیب

    گو جام مرا زہر سے لبریز بہت ہے

    کیا جانیے کیوں پینے سے پرہیز بہت ہے

    شو کیس میں رکھا ہوا عورت کا جو بت ہے

    گونگا ہی سہی پھر بھی دل آویز بہت ہے

    اشعار کے پھولوں سے لدی شاخ تمنا

    مٹی مرے احساس کی زرخیز بہت ہے

    کھل جاتا ہے تنہائی میں ملبوس کی مانند

    وہ رشک گل تر کہ کم آمیز بہت ہے

    موسم کا تقاضہ ہے کہ لذت کا بدن چوم

    خواہش کے درختوں میں ہوا تیز بہت ہے

    آنکھوں میں لیے پھرتا ہے خوابوں کے جزیرے

    وہ شاعر آشفتہ جو شب خیز بہت ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 402)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2013-14)
    • اشاعت : 2013-14

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY