گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے

فیض احمد فیض

گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے

فیض احمد فیض

MORE BY فیض احمد فیض

    INTERESTING FACT

    منگلمری جیل 29جنوری 1954

    گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے

    چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

    قفس اداس ہے یارو صبا سے کچھ تو کہو

    کہیں تو بہر خدا آج ذکر یار چلے

    کبھی تو صبح ترے کنج لب سے ہو آغاز

    کبھی تو شب سر کاکل سے مشکبار چلے

    بڑا ہے درد کا رشتہ یہ دل غریب سہی

    تمہارے نام پہ آئیں گے غم گسار چلے

    جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شب ہجراں

    ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے

    حضور یار ہوئی دفتر جنوں کی طلب

    گرہ میں لے کے گریباں کا تار تار چلے

    مقام فیضؔ کوئی راہ میں جچا ہی نہیں

    جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    خورشید بیگم

    خورشید بیگم

    تانیہ ویلس

    تانیہ ویلس

    فیض احمد فیض

    فیض احمد فیض

    Shruti Pathak

    Shruti Pathak

    گایتری اشوکن

    گایتری اشوکن

    رنا لیلیٰ

    رنا لیلیٰ

    RECITATIONS

    مہدی حسن

    مہدی حسن

    مہدی حسن

    گلوں میں رنگ بھرے باد نوبہار چلے مہدی حسن

    مآخذ:

    • Book : Nuskha Hai Wafa (Pg. 264)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY