ہائے دم بھر بھی دل ٹھہر نہ سکا

جلیل مانک پوری

ہائے دم بھر بھی دل ٹھہر نہ سکا

جلیل مانک پوری

MORE BYجلیل مانک پوری

    ہائے دم بھر بھی دل ٹھہر نہ سکا

    ہاتھ سینے پہ کوئی دھر نہ سکا

    آئینہ کس سے دیکھا جاتا ہے

    رشک کے مارے وہ سنور نہ سکا

    رہ گیا آنکھ میں نزاکت سے

    دل میں نقشہ ترا اتر نہ سکا

    اس جہاں سے گزر گئے لاکھوں

    اس گلی سے کوئی گزر نہ سکا

    مے کشی سے نجات مشکل ہے

    مے کا ڈوبا کبھی ابھر نہ سکا

    میرا نامہ خط مقدر تھا

    کہ نظر سے تری گزر نہ سکا

    جو ترے عشق میں تباہ ہوا

    کوئی اس کو تباہ کر نہ سکا

    آگ ایسی لگی تھی سینے میں

    آنکھ سے دل میں وہ اتر نہ سکا

    موسم گل میں بھی جلیلؔ افسوس

    دامن اپنا گلوں سے بھر نہ سکا

    مأخذ :
    • کتاب : Kainat-e-Jalil Manakpuri (Pg. 156)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY