ہاں میاں سچ ہے تمہاری تو بلا ہی جانے

بقا اللہ بقاؔ

ہاں میاں سچ ہے تمہاری تو بلا ہی جانے

بقا اللہ بقاؔ

MORE BYبقا اللہ بقاؔ

    ہاں میاں سچ ہے تمہاری تو بلا ہی جانے

    جو گزرتی ہے مرے دل پہ خدا ہی جانے

    دل سے نکلے کہیں پا بوسیٔ قاتل کی ہوس

    کاش وہ خوں کو مرے رنگ حنا ہی جانے

    دل کی واشد پہ عبث آہ نے کھینچی تکلیف

    کھولنے عقدے تو غنچوں کے صبا ہی جانے

    روز و شب نزع میں ہے عاشق چشم و لب یار

    نہ تو جینا ہی وہ سمجھے نہ فنا ہی جانے

    ہم تو نت دور سے خمیازہ کش حسرت ہیں

    لذت بوس و کنار اس کی حیا ہی جانے

    تیرے بیمار کو کیا ہووے شفا جس کے طبیب

    نہ تو کچھ درد کو سمجھے نہ دوا ہی جانے

    پوچھ اس دل سے جو ہے کاٹ ترے ابرو کا

    جوہر برش شمشیر سپاہی جانے

    اپنی مرضی تو یہ ہے بندۂ بت ہو رہیے

    آگے مرضی ہے خدا کی سو خدا ہی جانے

    طور پر اپنے سخن کون برا کہتا ہے

    پر یہ انداز جو پوچھو تو بقاؔ ہی جانے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY