حد نظر سے مرا آسماں ہے پوشیدہ

انور سدید

حد نظر سے مرا آسماں ہے پوشیدہ

انور سدید

MORE BYانور سدید

    حد نظر سے مرا آسماں ہے پوشیدہ

    خیال و خواب میں لپٹا جہاں ہے پوشیدہ

    چلا میں جانب منزل تو یہ ہوا معلوم

    یقیں گمان میں گم ہے گماں ہے پوشیدہ

    پلک پہ آ کے ستارے نے داستاں کہہ دی

    جو دل میں آگ ہے اس کا دھواں ہے پوشیدہ

    افق سے تا بہ افق ہے سراب پھیلا ہوا

    اور اس سراب میں سارا جہاں ہے پوشیدہ

    ستارہ کیا مجھے افلاک کی خبر دے گا؟

    نظر سے اس کی تو میرا جہاں ہے پوشیدہ

    تو خود ہے خوار و زبوں حرص و آز دنیا میں

    کھلے گا تجھ پہ کہاں جو جہاں ہے پوشیدہ

    میں آنکھ کھول کے تکتا ہوں دور تک انورؔ

    کہ ڈھونڈ لوں جو مرا آشیاں ہے پوشیدہ

    مآخذ
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 365)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY