ہم بچھڑ کے تم سے بادل کی طرح روتے رہے

زبیر رضوی

ہم بچھڑ کے تم سے بادل کی طرح روتے رہے

زبیر رضوی

MORE BYزبیر رضوی

    ہم بچھڑ کے تم سے بادل کی طرح روتے رہے

    تھک گئے تو خواب کی دہلیز پر سوتے رہے

    زندگی نے ہاتھ سے خنجر نہ رکھا ایک پل

    ہم قتیل غمزہ و ناز بتاں ہوتے رہے

    لوک لہجے کا سہانا پن سخن کی نغمگی

    شہر کی آبادیوں کے شور میں کھوتے رہے

    کیوں متاع دل کے لٹ جانے کا کوئی غم کرے

    شہر دلی میں تو ایسے واقعے ہوتے رہے

    سرخیاں اخبار کی گلیوں میں غل کرتی رہیں

    لوگ اپنے بند کمروں میں پڑے سوتے رہے

    محفلوں میں ہم رفیق و راز داں سمجھے گئے

    گھر کے آنگن میں مگر تنہائیاں بوتے رہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    زبیر رضوی

    زبیر رضوی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY