ہم کلامی میں در و دیوار سے

بہرام طارق

ہم کلامی میں در و دیوار سے

بہرام طارق

MORE BYبہرام طارق

    ہم کلامی میں در و دیوار سے

    کتنے جذبے رہ گئے اظہار سے

    دھوپ بڑھتے ہی جدا ہو جائے گا

    سایۂ دیوار بھی دیوار سے

    ہجر کا لمحہ مکمل ہو گیا

    روشنی جب کٹ گئی مینار سے

    ٹوٹ کر بکھرے خود اپنے سوگ میں

    دل لگا کر درد کے رخسار سے

    نیم وا گلیاں چرا کر لائی ہیں

    کیسا سپنا دیدۂ بے دار سے

    کتنے ہی مایوس لمحوں کے بھنور

    ہم نے ناپے ذہن کے پرکار سے

    عمر بھر طارقؔ الجھتے ہی رہے

    جسم کی گرتی ہوئی دیوار سے

    مآخذ :
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 376)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY