ہم سے ملتے تھے ستارے آپ کے

ابن مفتی

ہم سے ملتے تھے ستارے آپ کے

ابن مفتی

MORE BY ابن مفتی

    ہم سے ملتے تھے ستارے آپ کے

    پھر بھی کھو بیٹھے سہارے آپ کے

    کیسا جادو ہے سمجھ آتا نہیں

    نیند میری خواب سارے آپ کے

    ہم سے شاید معتبر ٹھہری صبا

    جس نے یہ گیسو سنوارے آپ کے

    آپ کی نظر کرم کے منتظر

    کب سے بیٹھے ہیں دوارے آپ کے

    کوئی اس کی آنکھ کو بھائے گا کیوں

    جس نے دیکھے ہوں نظارے آپ کے

    بن ترے سانسیں بھی اب چلتی نہیں

    ہر گھڑی چاہیں، اشارے آپ کے

    مسکرا کر دیکھیے تو ایک بار

    کہکشاں، یہ چاند تارے آپ کے

    جھوٹ ہے مفتیؔ بھلا بیٹھے ہو سب

    کیوں تھے پلکوں پر ستارے آپ کے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY