Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

ہمیشہ دل میں جو اپنے خیال زلف و کاکل ہے

خواجہ محمد وزیر

ہمیشہ دل میں جو اپنے خیال زلف و کاکل ہے

خواجہ محمد وزیر

MORE BYخواجہ محمد وزیر

    ہمیشہ دل میں جو اپنے خیال زلف و کاکل ہے

    تو سینے میں نفس ہر ایک موج بوئے سنبل ہے

    فساں ہے سخت جانی میری تیغ ناز قاتل کو

    کہ یاں جتنا ہے رنج نزع اتنا واں تغافل ہے

    مجھی کو کچھ تو اپنے کوچے میں آنے نہیں دیتا

    وگرنہ اے ستم ایجاد ہر گلشن میں بلبل ہے

    تری میناۓ گردن کی صفت کی ہے جو اے ساقی

    مری آواز کو کہتے ہیں سب آواز قلقل ہے

    وہی دل ہے بھرا ہو نشہ جس میں جام وحدت کا

    کہ ہے چھاتی کا پتھر بزم میں شیشہ جو بے مل ہے

    مرے جو سوز غم سے جل کے ہو وہ نیک نام آخر

    چراغ مردہ کو اکثر یہی کہتے ہیں سب گل ہے

    دیا سامان گلشن ہم کو ہجر رشک گلشن نے

    پریشانی ہے سنبل نالہ بلبل داغ دل گل ہے

    لکھی ہیں وصف یاں تک نرگس مخمور ساقی کی

    ہے خامہ گردن مینا صریر خامہ قلقل ہے

    بڑھا کر ربط کیونکر کم نہ منہ دکھلائے وہ مہ رو

    ہوا جب ماہ کامل دن پہ دن اس کو تنزل ہے

    بہاتی ہے کہیں بھی موج نقش بوریا خس کو

    نہ دے گا ناتواں کو رنج جو صاحب تحمل ہے

    کہا اس گل نے کل سامان‌ گلشن میں بھی رٹتا ہوں

    جو عاشق ہے مرا نالوں سے وہ ہم چشم بلبل ہے

    خط و رخسار و چشم و زلف دکھلا کر لگا کہنے

    یہ ریحاں ہے یہ گل ہے اور یہ نرگس ہے یہ سنبل ہے

    خیال زلف جاناں میں جو روؤں تو اگے سنبل

    وزیرؔ آنسو مرا ہر ایک گویا تخم سنبل ہے

    مأخذ :
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے