ہر چند اپنا حال نہ ہم سے بیاں ہوا

کرار نوری

ہر چند اپنا حال نہ ہم سے بیاں ہوا

کرار نوری

MORE BY کرار نوری

    ہر چند اپنا حال نہ ہم سے بیاں ہوا

    یہ حرف بے وجود مگر داستاں ہوا

    مانا کہ ہم پہ آج کوئی مہرباں ہوا

    دل کانپتا ہے یہ بھی اگر امتحاں ہوا

    جو کچھ میں کہہ چکا ہوں ذرا اس پہ غور کر

    جو کچھ بیاں ہوا ہے بہ مشکل بیاں ہوا

    اب تم کو جس خلوص کی ہم سے امید ہے

    مدت ہوئی وہ نذر دل دوستاں ہوا

    طوفان زندگی میں ضرورت تھی جب تری

    مجھ کو ہر ایک موج پہ تیرا گماں ہوا

    آداب قید و بند نے بدلا عجیب رنگ

    کنج قفس کا نام بھی اب آشیاں ہوا

    آنسو نکل پڑے ہیں خوشی میں ترے حضور

    کس تمکنت کے ساتھ یہ دریا رواں ہوا

    ذریعہ:

    • Book: auraq salnama magazines (Pg. 516)
    • Author: Wazir Agha,Arif Abdul Mateen
    • مطبع: Daftar Mahnama Auraq Lahore (1967)
    • اشاعت: 1967
    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed form your favorites