ہر ایک غم نچوڑ کے ہر اک برس جیے

گلزار

ہر ایک غم نچوڑ کے ہر اک برس جیے

گلزار

MORE BYگلزار

    ہر ایک غم نچوڑ کے ہر اک برس جیے

    دو دن کی زندگی میں ہزاروں برس جیے

    صدیوں پہ اختیار نہیں تھا ہمارا دوست

    دو چار لمحے بس میں تھے دو چار بس جیے

    صحرا کے اس طرف سے گئے سارے کارواں

    سن سن کے ہم تو صرف صدائے جرس جیے

    ہونٹوں میں لے کے رات کے آنچل کا اک سرا

    آنکھوں پہ رکھ کے چاند کے ہونٹوں کا مس جیے

    محدود ہیں دعائیں مرے اختیار میں

    ہر سانس پر سکون ہو تو سو برس جیے

    مآخذ:

    • کتاب : Chand Pukhraj Ka (Pg. 178)
    • Author : Gulzar
    • مطبع : Roopa And Company (1995)
    • اشاعت : 1995

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY