ہر گلی کوچے میں رونے کی صدا میری ہے

فرحت احساس

ہر گلی کوچے میں رونے کی صدا میری ہے

فرحت احساس

MORE BY فرحت احساس

    ہر گلی کوچے میں رونے کی صدا میری ہے

    شہر میں جو بھی ہوا ہے وہ خطا میری ہے

    یہ جو ہے خاک کا اک ڈھیر بدن ہے میرا

    وہ جو اڑتی ہوئی پھرتی ہے قبا میری ہے

    وہ جو اک شور سا برپا ہے عمل ہے میرا

    یہ جو تنہائی برستی ہے سزا میری ہے

    میں نہ چاہوں تو نہ کھل پائے کہیں ایک بھی پھول

    باغ تیرا ہے مگر باد صبا میری ہے

    ایک ٹوٹی ہوئی کشتی سا بنا بیٹھا ہوں

    نہ یہ مٹی نہ یہ پانی نہ ہوا میری ہے

    RECITATIONS

    فرحت احساس

    فرحت احساس

    فرحت احساس

    ہر گلی کوچے میں رونے کی صدا میری ہے فرحت احساس

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites