ہر گھڑی انقلاب میں گزری

فانی بدایونی

ہر گھڑی انقلاب میں گزری

فانی بدایونی

MORE BY فانی بدایونی

    ہر گھڑی انقلاب میں گزری

    زندگی کس عذاب میں گزری

    شوق تھا مانع تجلی دوست

    ان کی شوخی حجاب میں گزری

    کرم بے حساب چاہا تھا

    ستم بے حساب میں گزری

    ورنہ دشوار تھا سکون حیات

    خیر سے اضطراب میں گزری

    راز ہستی کی جستجو میں رہے

    رات تعبیر خواب میں گزری

    کچھ کٹی ہمت سوال میں عمر

    کچھ امید جواب میں گزری

    کس خرابی سے زندگی فانیؔ

    اس جہان خراب میں گزری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY