ہر طرف بکھر ہیں رنگیں سائے

باقی صدیقی

ہر طرف بکھر ہیں رنگیں سائے

باقی صدیقی

MORE BYباقی صدیقی

    ہر طرف بکھرے ہیں رنگیں سائے

    راہ رو کوئی نہ ٹھوکر کھائے

    زندگی حرف غلط ہی نکلی

    ہم نے معنی تو بہت پہنائے

    دامن خواب کہاں تک پھیلے

    ریگ کی موج کہاں تک جائے

    تجھ کو دیکھا ترے وعدے دیکھے

    اونچی دیوار کے لمبے سائے

    بند کلیوں کی ادا کہتی ہے

    بات کرنے کے ہیں سو پیرائے

    بام و در کانپ اٹھے ہیں باقیؔ

    اس طرح جھوم کے بادل آئے

    مأخذ :
    • کتاب : baar-e-safar (Pg. 19)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY