ہستی کے ہر اک موڑ پہ آئینہ بنا ہوں

مغیث الدین فریدی

ہستی کے ہر اک موڑ پہ آئینہ بنا ہوں

مغیث الدین فریدی

MORE BYمغیث الدین فریدی

    ہستی کے ہر اک موڑ پہ آئینہ بنا ہوں

    مٹ مٹ کے ابھرتا ہوا نقش کف پا ہوں

    وہ دست طلب ہوں جو دعا کو نہیں اٹھتا

    جو لب پہ کسی کے نہیں آئی وہ دعا ہوں

    اس دور میں انسان کا چہرہ نہیں ملتا

    کب سے میں نقابوں کی تہیں کھول رہا ہوں

    بستی میں بسیرے کا ارادہ تو نہیں تھا

    دیوانہ ہوں صحرا کا پتا بھول گیا ہوں

    جاتی ہی نہیں دل سے تری یاد کی خوشبو

    میں دور خزاں میں بھی مہکتا ہی رہا ہوں

    مآخذ:

    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 186)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY