ہوس کو ہے نشاط کار کیا کیا

مرزا غالب

ہوس کو ہے نشاط کار کیا کیا

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    ہوس کو ہے نشاط کار کیا کیا

    نہ ہو مرنا تو جینے کا مزا کیا

    تجاہل پیشگی سے مدعا کیا

    کہاں تک اے سراپا ناز کیا کیا

    نوازش ہائے بے جا دیکھتا ہوں

    شکایت ہائے رنگیں کا گلہ کیا

    نگاہ بے محابا چاہتا ہوں

    تغافل ہائے تمکیں آزما کیا

    فروغ شعلۂ خس یک نفس ہے

    ہوس کو پاس ناموس وفا کیا

    نفس موج محیط بے خودی ہے

    تغافل ہائے ساقی کا گلہ کیا

    دماغ عطر پیراہن نہیں ہے

    غم آوارگی ہائے صبا کیا

    دل ہر قطرہ ہے ساز انا البحر

    ہم اس کے ہیں ہمارا پوچھنا کیا

    محابا کیا ہے میں ضامن ادھر دیکھ

    شہیدان نگہ کا خوں بہا کیا

    سن اے غارت گر جنس وفا سن

    شکست شیشۂ دل کی صدا کیا

    کیا کس نے جگر داری کا دعویٰ

    شکیب خاطر عاشق بھلا کیا

    یہ قاتل وعدۂ صبر آزما کیوں

    یہ کافر فتنۂ طاقت ربا کیا

    بلائے جاں ہے غالبؔ اس کی ہر بات

    عبارت کیا اشارت کیا ادا کیا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مہناز بیگم

    مہناز بیگم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ہوس کو ہے نشاط کار کیا کیا نعمان شوق

    مآخذ :
    • کتاب : Deewan-e-Ghalib Jadeed (Al-Maroof Ba Nuskha-e-Hameedia) (Pg. 191)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY