اک اک قدم فریب تمنا سے بچ کے چل

شکیل بدایونی

اک اک قدم فریب تمنا سے بچ کے چل

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    اک اک قدم فریب تمنا سے بچ کے چل

    دنیا کی آرزو ہے تو دنیا سے بچ کے چل

    خود ڈھونڈ لے گا تجھ کو ترا منفرد مقام

    راہ طلب میں نقش کف پا سے بچ کے چل

    باقی ہے میرے دل میں ابھی عظمت وجود

    قطرے سے کہہ رہا ہوں کہ دریا سے بچ کے چل

    ملتی نہیں ہے راہ سکوں خوف و یاس میں

    گلشن کی جستجو ہے تو صحرا سے بچ کے چل

    منہ جادۂ وفا سے نہ موڑ اے وفا شعار

    لیکن حدود چشم تماشا سے بچ کے چل

    کتنی حسیں ہیں ان کے ستم کی مسرتیں

    شکر کرم کی زحمت بے جا سے بچ کے چل

    لمحے اداس اداس فضائیں گھٹی گھٹی

    دنیا اگر یہی ہے تو دنیا سے بچ کے چل

    اپنے ادب پہ ناز ہے تجھ کو اگر شکیلؔ

    مغرب زدہ ادیب کی دنیا سے بچ کے چل

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اک اک قدم فریب تمنا سے بچ کے چل نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY