اک تیز تیر تھا کہ لگا اور نکل گیا

منیر نیازی

اک تیز تیر تھا کہ لگا اور نکل گیا

منیر نیازی

MORE BY منیر نیازی

    اک تیز تیر تھا کہ لگا اور نکل گیا

    ماری جو چیخ ریل نے جنگل دہل گیا

    سویا ہوا تھا شہر کسی سانپ کی طرح

    میں دیکھتا ہی رہ گیا اور چاند ڈھل گیا

    خواہش کی گرمیاں تھیں عجب ان کے جسم میں

    خوباں کی صحبتوں میں مرا خون جل گیا

    تھی شام زہر رنگ میں ڈوبی ہوئی کھڑی

    پھر اک ذرا سی دیر میں منظر بدل گیا

    مدت کے بعد آج اسے دیکھ کر منیرؔ

    اک بار دل تو دھڑکا مگر پھر سنبھل گیا

    مآخذ:

    • Book: kulliyat-e-muniir niyaazii (Pg. 318)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites