ان اندھیروں سے پرے اس شب غم سے آگے

عشرت قادری

ان اندھیروں سے پرے اس شب غم سے آگے

عشرت قادری

MORE BY عشرت قادری

    ان اندھیروں سے پرے اس شب غم سے آگے

    اک نئی صبح بھی ہے شام الم سے آگے

    دشت میں کس سے کریں آبلہ پائی کا گلا

    رہنما کوئی نہیں نقش قدم سے آگے

    ساز میں کھوئے رہے سوز نہ سمجھا کوئی

    درد کی ٹیس تھی پازیب کی چھم سے آگے

    اے خوشا عزم جواں ذوق سفر جوش طلب

    حادثے بڑھ نہ سکے اپنے قدم سے آگے

    یاد ہے لذت آزار محبت اب تک

    دل کو ملتا تھا سکوں مشق ستم سے آگے

    سرخ رو ہے جہاں تاریخ دو عالم عشرتؔ

    خون ٹپکا ہے وہیں نوک قلم سے آگے

    مآخذ:

    • Book : Sahar Numa (Pg. 95)
    • Author : Ishrat Qadri
    • مطبع : Madhya Pradesh Urdu Academy (1984)
    • اشاعت : 1984

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY