ان گیسوؤں میں شانۂ ارماں نہ کیجئے

حفیظ جالندھری

ان گیسوؤں میں شانۂ ارماں نہ کیجئے

حفیظ جالندھری

MORE BYحفیظ جالندھری

    ان گیسوؤں میں شانۂ ارماں نہ کیجئے

    خون جگر سے دعوت مژگاں نہ کیجئے

    مر جائیے نہ کیجئے ذکر بہشت و حور

    اب خواب کو بھی خواب پریشاں نہ کیجئے

    باقی ہو جو بھی حشر یہیں پر اٹھائیے

    مرنے کے بعد زیست کا ساماں نہ کیجئے

    دوزخ کو دیجیے نہ پراگندگی مری

    شیرازۂ بہشت پریشاں نہ کیجئے

    شاید یہی جہاں کسی مجنوں کا گھر بنے

    ویرانہ بھی اگر ہے تو ویراں نہ کیجئے

    کیا ناخدا بغیر کوئی ڈوبتا نہیں

    مجھ کو مرے خدا سے پشیماں نہ کیجئے

    ہے بت کدے میں بھی اسے ایمان کا خیال

    کیوں اعتبار مرد مسلماں نہ کیجئے

    ہم سے یہ بار لطف اٹھایا نہ جائے گا

    احساں یہ کیجئے کہ یہ احساں نہ کیجئے

    آئینہ دیکھیے مری صورت نہ دیکھیے

    میں آئینہ نہیں مجھے حیراں نہ کیجئے

    تو ہی عزیز خاطر احباب ہے حفیظؔ

    کیا کیجئے اگر تجھے قرباں نہ کیجئے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Hafeez Jalandhari (Pg. 463)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY