اس دشت سخن میں کوئی کیا پھول کھلائے

حمایت علی شاعر

اس دشت سخن میں کوئی کیا پھول کھلائے

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    اس دشت سخن میں کوئی کیا پھول کھلائے

    چمکی جو ذرا دھوپ تو جلنے لگے سائے

    سورج کے اجالے میں چراغاں نہیں ممکن

    سورج کو بجھا دو کہ زمیں جشن منائے

    مہتاب کا پرتو بھی ستاروں پہ گراں ہے

    بیٹھے ہیں شب تار سے امید لگائے

    ہر موج ہوا شمع کے در پے ہے ازل سے

    دل سے کہو لو اپنی ذرا اور بڑھائے

    کس کوچۂ طفلاں میں چلے آئے ہو شاعرؔ

    آوازہ کسے ہے تو کوئی سنگ اٹھائے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس دشت سخن میں کوئی کیا پھول کھلائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY