اس دشت پہ احساں نہ کر اے ابر رواں اور

حمایت علی شاعر

اس دشت پہ احساں نہ کر اے ابر رواں اور

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    اس دشت پہ احساں نہ کر اے ابر رواں اور

    جب آگ ہو نم خوردہ تو اٹھتا ہے دھواں اور

    وہ قحط جنوں ہے کہ کوئی چاک گریباں

    آتا ہے نظر بھی تو گزرتا ہے گماں اور

    یہ سنگ زنی میرے لیے بارش گل ہے

    تھک جاؤ تو کچھ سنگ بدست دگراں اور

    سورج کو یہ غم ہے کہ سمندر بھی ہے پایاب

    یا رب مرے قلزم میں کوئی سیل رواں اور

    شاعرؔ یہ زمیں حضرت غالبؔ کی زمیں ہے

    ہر شعر طلب کرتا ہے خون رگ جاں اور

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس دشت پہ احساں نہ کر اے ابر رواں اور نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY