اس شہر خفتگاں میں کوئی تو اذان دے

حمایت علی شاعر

اس شہر خفتگاں میں کوئی تو اذان دے

حمایت علی شاعر

MORE BY حمایت علی شاعر

    اس شہر خفتگاں میں کوئی تو اذان دے

    ایسا نہ ہو زمیں کا جواب آسمان دے

    پڑھنا ہے تو نوشتۂ بین السطور پڑھ

    تحریر بے حروف کے معنی پہ دھیان دے

    سورج تو کیا بجھے گا مگر اے ہوائے مہر

    تپتی زمیں پہ ابر کی چادر ہی تان دے

    اب دھوپ سے گریز کرو گے تو ایک دن

    ممکن ہے سایہ بھی نہ کوئی سائبان دے

    میں سوچتا ہوں اس لیے شاید میں زندہ ہوں

    ممکن ہے یہ گمان حقیقت کا گیان دے

    میں سچ تو بولتا ہوں مگر اے خدائے حرف

    تو جس میں سوچتا ہے مجھے وہ زبان دے

    سورج کے گرد گھوم رہا ہوں زمیں کے ساتھ

    اس گردش مدام سے مجھ کو امان دے

    میں تنگیٔ مکان سے نہ ہو جاؤں تنگ دل

    اپنی طرح مجھے بھی کوئی لا مکان دے

    میری گواہی دینے لگی میری شاعری

    یا رب مرے سخن کو وہ حسن بیان دے

    مآخذ:

    • Book : Pakistani Adab (Pg. 437)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY