اس واسطے دامن چاک کیا شاید یہ جنوں کام آ جائے

انور مرزاپوری

اس واسطے دامن چاک کیا شاید یہ جنوں کام آ جائے

انور مرزاپوری

MORE BY انور مرزاپوری

    اس واسطے دامن چاک کیا شاید یہ جنوں کام آ جائے

    دیوانہ سمجھ کر ہی ان کے ہونٹوں پہ مرا نام آ جائے

    میں خوش ہوں اگر گلشن کے لیے کچھ میرا لہو کام آ جائے

    لیکن مجھ کو ڈر ہے اس کا گلچیں پہ نہ الزام آ جائے

    اے کاش ہماری قسمت میں ایسی بھی کوئی شام آ جائے

    اک چاند فلک پر نکلا ہو اک چاند سر بام آ جائے

    مے خانہ سلامت رہ جائے اس کی تو کسی کو فکر نہیں

    مے خوار ہیں بس اس خواہش میں ساقی پہ کچھ الزام آ جائے

    پینے کا سلیقہ کچھ بھی نہیں اس پر ہے یہ خواہش رندوں کی

    جس جام پہ حق ہے ساقی کا ہاتھوں میں وہی جام آ جائے

    اس واسطے خاک پروانہ پر شمع بہاتی ہے آنسو

    ممکن ہے وفا کے قصے میں اس کا بھی کہیں نام آ جائے

    افسانہ مکمل ہے لیکن افسانے کا عنواں کچھ بھی نہیں

    اے موت بس اتنی مہلت دے ان کا کوئی پیغام آ جائے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY