عشق دہن میں گزری ہے کیا کچھ نہ پوچھئے

آغا حجو شرف

عشق دہن میں گزری ہے کیا کچھ نہ پوچھئے

آغا حجو شرف

MORE BYآغا حجو شرف

    عشق دہن میں گزری ہے کیا کچھ نہ پوچھئے

    نا گفتنی ہے حال مرا کچھ نہ پوچھئے

    کیا درد عشق کا ہے مزا کچھ نہ پوچھئے

    کہتا ہے دل کسی سے دوا کچھ نہ پوچھئے

    محشر کے دغدغے کا میں احوال کیا کہوں

    ہنگامہ جو ہوا سو ہوا کچھ نہ پوچھئے

    جب پوچھئے تو پوچھئے کیا گزری عشق میں

    ہم سے تو اور اس کے سوا کچھ نہ پوچھئے

    کیا کیا یہ سبز باغ دکھاتی ہے نزع میں

    دم دے رہی ہے جو جو قضا کچھ نہ پوچھئے

    پوچھا جو ہم نے گور غریباں کا جا کے حال

    آئی یہ تربتوں سے صدا کچھ نہ پوچھئے

    قسمت سے پائیے جو کبھی اس کو خوش مزاج

    کیا کچھ نہ کہئے یار سے کیا کچھ نہ پوچھئے

    رگڑی ہیں ایڑیاں تو ہوئی ہے یہ مستجاب

    کس عاجزی سے کی ہے دعا کچھ نہ پوچھئے

    چھوڑا جو مردہ جان کے صیاد نے مجھے

    کیوں کر اڑا میں ہو کے رہا کچھ نہ پوچھئے

    ترسا کیا میں دولت دیدار کے لیے

    قسمت نے جو سلوک کیا کچھ نہ پوچھئے

    الفت کا نام لے کے نظر بند ہو گئے

    پائی جو پیار کر کے سزا کچھ نہ پوچھئے

    کیا سرگزشت گور غریباں کی میں کہوں

    احوال بندگان خدا کچھ نہ پوچھئے

    خوشبو نے آپ کی جو سرافراز اسے کیا

    کس ناز سے چلی ہے صبا کچھ نہ پوچھئے

    پوچھا شرفؔ کے مرنے کا ان سے جو واقعہ

    آنکھوں میں اشک بھر کے کہا کچھ نہ پوچھئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY