عشق کے شعلے کو بھڑکاؤ کہ کچھ رات کٹے

مخدومؔ محی الدین

عشق کے شعلے کو بھڑکاؤ کہ کچھ رات کٹے

مخدومؔ محی الدین

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    عشق کے شعلے کو بھڑکاؤ کہ کچھ رات کٹے

    دل کے انگارے کو دہکاؤ کہ کچھ رات کٹے

    ہجر میں ملنے شب ماہ کے غم آئے ہیں

    چارہ سازوں کو بھی بلواؤ کہ کچھ رات کٹے

    کوئی جلتا ہی نہیں کوئی پگھلتا ہی نہیں

    موم بن جاؤ پگھل جاؤ کہ کچھ رات کٹے

    چشم و رخسار کے اذکار کو جاری رکھو

    پیار کے نامہ کو دہراؤ کہ کچھ رات کٹے

    آج ہو جانے دو ہر ایک کو بد مست و خراب

    آج ایک ایک کو پلواؤ کہ کچھ رات کٹے

    کوہ غم اور گراں اور گراں اور گراں

    غم زدو تیشے کو چمکاؤ کہ کچھ رات کٹے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    جگجیت سنگھ

    جگجیت سنگھ

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Makhdum Muhi-ud-din (Pg. 198)

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY