اذن خرام لیتے ہوئے آسماں سے ہم

اسرار الحق مجاز

اذن خرام لیتے ہوئے آسماں سے ہم

اسرار الحق مجاز

MORE BY اسرار الحق مجاز

    اذن خرام لیتے ہوئے آسماں سے ہم

    ہٹ کر چلے ہیں رہ گزر کارواں سے ہم

    کیا پوچھتے ہو جھومتے آئے کہاں سے ہم

    پی کر اٹھے ہیں خمکدۂ آسماں سے ہم

    کیوں کر ہوا ہے فاش زمانہ پہ کیا کہیں

    وہ راز دل جو کہہ نہ سکے راز داں سے ہم

    ہمدم یہی ہے رہ گزر یار خوش خرام

    گزرے ہیں لاکھ بار اسی کہکشاں سے ہم

    کیا کیا ہوا ہے ہم سے جنوں میں نہ پوچھئے

    الجھے کبھی زمیں سے کبھی آسماں سے ہم

    ہر نرگس جمیل نے مخمور کر دیا

    پی کر اٹھے شراب ہر اک بوستاں سے ہم

    ٹھکرا دیئے ہیں عقل و خرد کے صنم کدے

    گھبرا چکے تھے کشمکش امتحاں سے ہم

    دیکھیں گے ہم بھی کون ہے سجدہ طراز شوق

    لے سر اٹھا رہے ہیں ترے آستاں سے ہم

    بخشی ہیں ہم کو عشق نے وہ جرأتیں مجازؔ

    ڈرتے نہیں سیاست اہل جہاں سے ہم

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    Urdu Studio

    Urdu Studio

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY