جب سے ہوا ہے عشق ترے اسم ذات کا

آغا حجو شرف

جب سے ہوا ہے عشق ترے اسم ذات کا

آغا حجو شرف

MORE BYآغا حجو شرف

    جب سے ہوا ہے عشق ترے اسم ذات کا

    آنکھوں میں پھر رہا ہے مرقع نجات کا

    مالک ہی کے سخن میں تلون جو پائیے

    کہئے یقین لائیے پھر کس کی بات کا

    دفتر ہماری عمر کا دیکھو گے جب کبھی

    فوراً اسے کرو گے مرقع نجات کا

    الفت میں مر مٹے ہیں تو پوچھے ہی جائیں گے

    اک روز لطف اٹھائیں گے اس واردات کا

    سرخی کی خط شوق میں حاجت جہاں ہوئی

    خون جگر میں نوک ڈبویا دوات کا

    موجد جو نور کا ہے وہ میرا چراغ ہے

    پروانہ ہوں میں انجمن کائنات کا

    اے شمع بزم یار وہ پروانہ کون تھا

    لو میں تری یہ داغ ہے جس کی وفات کا

    مجھ سے تو لن ترانیاں اس نے کبھی نہ کیں

    موسی جواب دے نہ سکے جس کی بات کا

    اس بے خودی کا دیں گے خدا کو وہ کیا جواب

    دم بھرتے ہیں جو چند نفس کے حباب کا

    قدسی ہوے مطیع وہ طاعت بشر نے کی

    کل اختیار حق نے دیا کائنات کا

    ایسا عتاب نامہ تو دیکھا سنا نہیں

    آیا ہے کس کے واسطے سورہ برات کا

    ذی روح مجھ کو تو نے کیا مشت خاک سے

    بندہ رہوں گا میں ترے اس التفات کا

    ناچیز ہوں مگر میں ہوں ان کا فسانہ گو

    قرآن حمد نامہ ہے جن کی صفات کا

    رویا ہے میرا دیدۂ تر کس شہید کو

    مشہور ہو گیا ہے جو چشمہ فرات کا

    آئے تو آئے عالم ارواح سے وہاں

    دم بھر جہاں نہیں ہے بھروسا ثبات کا

    دھوم اس کے حسن کی ہے دو عالم میں اے شرفؔ

    خورشید روز کا ہے وہ مہتاب رات کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY