جب تری یاد کے رنگوں سے بنا لی ہم نے

منظر نقوی

جب تری یاد کے رنگوں سے بنا لی ہم نے

منظر نقوی

MORE BYمنظر نقوی

    جب تری یاد کے رنگوں سے بنا لی ہم نے

    دل کی دیوار پہ تصویر سجا لی ہم نے

    اس کے اسباب سے نکلا ہے پریشاں کاغذ

    بات اتنی تھی مگر خوب اچھالی ہم نے

    تم سے ملنے کو ستاروں میں بھی ہلچل دیکھی

    مدتوں بعد کوئی فال نکالی ہم نے

    یوں ہی اوروں کے لیے لڑنے چلے آئے ہو

    کب کوئی بات تمہاری تھی جو ٹالی ہم نے

    اب جو گلشن میں خزاؤں کی عمل داری ہے

    فصل گل کی کبھی بنیاد نہ ڈالی ہم نے

    کئی آنسو مری آنکھوں میں ہی تحلیل ہوئے

    دل میں آئے تو پھر اک یاد منا لی ہم نے

    مأخذ :
    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 690)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY