جب ذرا رات ہوئی اور مہ و انجم آئے

اسد بھوپالی

جب ذرا رات ہوئی اور مہ و انجم آئے

اسد بھوپالی

MORE BYاسد بھوپالی

    جب ذرا رات ہوئی اور مہ و انجم آئے

    بارہا دل نے یہ محسوس کیا تم آئے

    ایسے اقرار میں انکار کے سو پہلو ہیں

    وہ تو کہیے کہ لبوں پہ نہ تبسم آئے

    نہ وہ آواز میں رس ہے نہ وہ لہجے میں کھنک

    کیسے کلیوں کو ترا طرز تکلم آئے

    بارہا یہ بھی ہوا انجمن ناز سے ہم

    صورت موج اٹھے مثل تلاطم آئے

    اے مرے وعدہ شکن ایک نہ آنے سے ترے

    دل کو بہکانے کئی تلخ توہم آئے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جب ذرا رات ہوئی اور مہ و انجم آئے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY