جہاں خراب سہی ہم بدن دریدہ سہی

غالب ایاز

جہاں خراب سہی ہم بدن دریدہ سہی

غالب ایاز

MORE BYغالب ایاز

    جہاں خراب سہی ہم بدن دریدہ سہی

    تری تلاش میں نکلے ہیں پا بریدہ سہی

    جہان شعر میں میری کئی ریاستیں ہیں

    میں اپنے شہر میں گمنام و ناشنیدہ سہی

    بھلے ہی چھاؤں نہ دے آسرا تو دیتا ہے

    یہ آرزو کا شجر ہے خزاں رسیدہ سہی

    انہی بجھی ہوئی آنکھوں میں خواب اتریں گے

    یقیں نہ چھوڑ یہ بیمار و شب گزیدہ سہی

    دلوں کو جوڑنے والی غزل سلامت ہے

    تعلقات ہمارے بھلے کشیدہ سہی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY