جن خواہشوں کو دیکھتی رہتی تھی خواب میں

فاطمہ حسن

جن خواہشوں کو دیکھتی رہتی تھی خواب میں

فاطمہ حسن

MORE BY فاطمہ حسن

    جن خواہشوں کو دیکھتی رہتی تھی خواب میں

    اب لکھ رہی ہوں ان کو حقیقت کے باب میں

    اک جھیل کے کنارے پرندوں کے درمیاں

    سورج کو ہوتے دیکھا تھا تحلیل آب میں

    خوابوں پر اختیار نہ یادوں پہ زور ہے

    کب زندگی گزاری ہے اپنے حساب میں

    اک ہاتھ اس کا جال پہ پتوار ایک میں

    اور ڈوبتا وجود مرا سیل آب میں

    پروائی چل کے اور بھی وحشت بڑھا گئی

    ہلکی سی آ گئی تھی کمی اضطراب میں

    مآخذ:

    • Book : siip-volume-47 (Pg. 251)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY