جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

مرزا غالب

جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے

    جاں کالبد صورت دیوار میں آوے

    سایہ کی طرح ساتھ پھریں سرو و صنوبر

    تو اس قد دل کش سے جو گلزار میں آوے

    تب ناز گراں مایگی اشک بجا ہے

    جب لخت جگر دیدۂ خوں بار میں آوے

    دے مجھ کو شکایت کی اجازت کہ ستم گر

    کچھ تجھ کو مزا بھی مرے آزار میں آوے

    اس چشم فسوں گر کا اگر پائے اشارہ

    طوطی کی طرح آئینہ گفتار میں آوے

    کانٹوں کی زباں سوکھ گئی پیاس سے یا رب

    اک آبلہ پا وادی پر خار میں آوے

    مر جاؤں نہ کیوں رشک سے جب وہ تن نازک

    آغوش خم حلقۂ زنار میں آوے

    غارت گر ناموس نہ ہو گر ہوس زر

    کیوں شاہد گل باغ سے بازار میں آوے

    تب چاک گریباں کا مزا ہے دل نالاں

    جب اک نفس الجھا ہوا ہر تار میں آوے

    آتشکدہ ہے سینہ مرا راز نہاں سے

    اے واے اگر معرض اظہار میں آوے

    گنجینۂ معنی کا طلسم اس کو سمجھیے

    جو لفظ کہ غالبؔ مرے اشعار میں آوے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سید طاہر حسنی

    سید طاہر حسنی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY