جس طرح لوگ خسارے میں بہت سوچتے ہیں

اقبال کوثر

جس طرح لوگ خسارے میں بہت سوچتے ہیں

اقبال کوثر

MORE BY اقبال کوثر

    جس طرح لوگ خسارے میں بہت سوچتے ہیں

    آج کل ہم ترے بارے میں بہت سوچتے ہیں

    کون حالات کی سوچوں کے تموج میں نہیں

    ہم بھی بہہ کر اسی دھارے میں بہت سوچتے ہیں

    ہنر کوزہ گری نے انہیں بخشی ہے تراش

    یا یہ سب نقش تھے گارے میں بہت سوچتے ہیں

    دھیان دھرتی کا نکلتا ہی نہیں ہے دل سے

    جب سے اترے ہیں ستارے میں بہت سوچتے ہیں

    اب محبت میں بھی اقبالؔ ہماری اوقات

    کیوں نہیں اپنے گزارے میں بہت سوچتے ہیں

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites