جو آنسوؤں کی زباں کو میاں سمجھنے لگے

شارب مورانوی

جو آنسوؤں کی زباں کو میاں سمجھنے لگے

شارب مورانوی

MORE BY شارب مورانوی

    جو آنسوؤں کی زباں کو میاں سمجھنے لگے

    سمندروں کا وہ درد نہاں سمجھنے لگے

    یہ جب سے جانا کہ زہر بدن نکلتا ہے

    ہم آنسوؤں کو بھی جنس گراں سمجھنے لگے

    جو ٹپکے دامن ہستی پہ اشک خوں میرے

    تو اہل زر اسے گل کاریاں سمجھنے لگے

    سروں پہ اوڑھ کے مزدور دھوپ کی چادر

    خود اپنے سر پہ اسے سائباں سمجھنے لگے

    شجر کو اپنی زمیں سے لپٹ کے رہنا ہے

    یہ بات اڑتے پرندے کہاں سمجھنے لگے

    میں چپ ہوا تھا کہ ٹکراؤ ختم ہو جائے

    وہ میرے صبر کو کمزوریاں سمجھنے لگے

    وہ جب سے آ گئے مہمان بن کے آنکھوں میں

    ہم اپنے دل کے کھنڈر کو مکاں سمجھنے لگے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY