جو چراغ سارے بجھا چکے انہیں انتظار کہاں رہا

ادا جعفری

جو چراغ سارے بجھا چکے انہیں انتظار کہاں رہا

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    جو چراغ سارے بجھا چکے انہیں انتظار کہاں رہا

    یہ سکوں کا دور شدید ہے کوئی بے قرار کہاں رہا

    جو دعا کو ہاتھ اٹھائے بھی تو مراد یاد نہ آ سکی

    کسی کارواں کا جو ذکر تھا وہ پس غبار کہاں رہا

    یہ طلوع روز ملال ہے سو گلہ بھی کس سے کریں گے ہم

    کوئی دل ربا کوئی دل شکن کوئی دل فگار کہاں رہا

    کوئی بات خواب و خیال کی جو کرو تو وقت کٹے گا اب

    ہمیں موسموں کے مزاج پر کوئی اعتبار کہاں رہا

    ہمیں کو بہ کو جو لیے پھری کسی نقش پا کی تلاش تھی

    کوئی آفتاب تھا ضو فگن سر رہ گزار کہاں رہا

    مگر ایک دھن تو لگی رہی نہ یہ دل دکھا نہ گلہ ہوا

    کہ نگہ کو رنگ بہار پر کوئی اختیار کہاں رہا

    سر دشت ہی رہا تشنہ لب جسے زندگی کی تلاش تھی

    جسے زندگی کی تلاش تھی لب جوئبار کہاں رہا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    نامعلوم

    نامعلوم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY