کالی رات کے صحراؤں میں نور سپارا لکھا تھا

احمد سلمان

کالی رات کے صحراؤں میں نور سپارا لکھا تھا

احمد سلمان

MORE BY احمد سلمان

    کالی رات کے صحراؤں میں نور سپارا لکھا تھا

    جس نے شہر کی دیواروں پر پہلا نعرہ لکھا تھا

    لاش کے ننھے ہاتھ میں بستہ اور اک کھٹی گولی تھی

    خون میں ڈوبی اک تختی پر غین غبارہ لکھا تھا

    آخر ہم ہی مجرم ٹھہرے جانے کن کن جرموں کے

    فرد عمل تھی جانے کس کی نام ہمارا لکھا تھا

    سب نے مانا مرنے والا دہشت گرد اور قاتل تھا

    ماں نے پھر بھی قبر پہ اس کی راج دلارا لکھا تھا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    احمد سلمان

    احمد سلمان

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY