کبھی زباں پہ نہ آیا کہ آرزو کیا ہے

اختر سعید خان

کبھی زباں پہ نہ آیا کہ آرزو کیا ہے

اختر سعید خان

MORE BYاختر سعید خان

    کبھی زباں پہ نہ آیا کہ آرزو کیا ہے

    غریب دل پہ عجب حسرتوں کا سایا ہے

    صبا نے جاگتی آنکھوں کو چوم چوم لیا

    نہ جانے آخر شب انتظار کس کا ہے

    یہ کس کی جلوہ گری کائنات ہے میری

    کہ خاک ہو کے بھی دل شعلۂ تمنا ہے

    تری نظر کی بہار آفرینیاں تسلیم

    مگر یہ دل میں جو کانٹا سا اک کھٹکتا ہے

    جہان فکر و نظر کی اڑا رہی ہے ہنسی

    یہ زندگی جو سر رہ گزر تماشا ہے

    یہ دشت وہ ہے جہاں راستہ نہیں ملتا

    ابھی سے لوٹ چلو گھر ابھی اجالا ہے

    یہی رہا ہے بس اک دل کے غم گساروں میں

    ٹھہر ٹھہر کے جو آنسو پلک تک آتا ہے

    ٹھہر گئے یہ کہاں آ کے روز و شب اخترؔ

    کہ آفتاب ہے سر پر مگر اندھیرا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کبھی زباں پہ نہ آیا کہ آرزو کیا ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY