کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا

امجد اسلام امجد

کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا

امجد اسلام امجد

MORE BY امجد اسلام امجد

    کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا

    وہ جو مل گیا اسے یاد رکھ جو نہیں ملا اسے بھول جا

    وہ ترے نصیب کی بارشیں کسی اور چھت پہ برس گئیں

    دل بے خبر مری بات سن اسے بھول جا اسے بھول جا

    میں تو گم تھا تیرے ہی دھیان میں تری آس تیرے گمان میں

    صبا کہہ گئی مرے کان میں مرے ساتھ آ اسے بھول جا

    کسی آنکھ میں نہیں اشک غم ترے بعد کچھ بھی نہیں ہے کم

    تجھے زندگی نے بھلا دیا تو بھی مسکرا اسے بھول جا

    کہیں چاک جاں کا رفو نہیں کسی آستیں پہ لہو نہیں

    کہ شہید راہ ملال کا نہیں خوں بہا اسے بھول جا

    کیوں اٹا ہوا ہے غبار میں غم زندگی کے فشار میں

    وہ جو درد تھا ترے بخت میں سو وہ ہو گیا اسے بھول جا

    تجھے چاند بن کے ملا تھا جو ترے ساحلوں پہ کھلا تھا جو

    وہ تھا ایک دریا وصال کا سو اتر گیا اسے بھول جا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    امجد اسلام امجد

    امجد اسلام امجد

    RECITATIONS

    فہد حسین

    فہد حسین

    فہد حسین

    کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا فہد حسین

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY