کہوں یہ کیسے کہ جینے کا حوصلہ دیتے

خلیل الرحمن اعظمی

کہوں یہ کیسے کہ جینے کا حوصلہ دیتے

خلیل الرحمن اعظمی

MORE BY خلیل الرحمن اعظمی

    کہوں یہ کیسے کہ جینے کا حوصلہ دیتے

    مگر یہی کہ مجھے غم کوئی نیا دیتے

    شب گزشتہ بہت تیز چل رہی تھی ہوا

    صدا تو دی پہ کہاں تک تجھے صدا دیتے

    کئی زمانے اسی پیچ و تاب میں گزرے

    کہ آسماں کو ترے پاؤں پر جھکا دیتے

    یہ کہئے لوح جبیں پر ہے داغ رسوائی

    زمانے والے ہمیں خاک میں ملا دیتے

    ہوئی تھی ہم سے جو لغزش تو تھام لینا تھا

    ہمارے ہاتھ تمہیں عمر بھر دعا دیتے

    بھلا ہوا کہ کوئی اور مل گیا تم سا

    وگرنہ ہم بھی کسی دن تمہیں بھلا دیتے

    کوئی ہو لمحۂ فرصت کہ بیٹھ کر ہم بھی

    ذرا عروس تمنا کو آئینہ دیتے

    ملا ہے جرم وفا پر عذاب مہجوری

    ہم اپنے آپ کو اس سے کڑی سزا دیتے

    زباں پہ کس لیے یہ حرف ناگوار آتا

    ہمارے زخم ہمارا اگر پتا دیتے

    ذرا سی دیر ٹھہرتی جو گردش ایام

    اسے شباب گریزاں کا واسطہ دیتے

    0
    COMMENT
    COMMENTS
    تبصرے دیکھیے

    Critique mode ON

    Tap on any word to submit a critique about that line. Word-meanings will not be available while you’re in this mode.

    OKAY

    SUBMIT CRITIQUE

    نام

    ای-میل

    تبصره

    Thanks, for your feedback

    Critique draft saved

    EDIT DISCARD

    CRITIQUE MODE ON

    TURN OFF

    Discard saved critique?

    CANCEL DISCARD

    CRITIQUE MODE ON - Click on a line of text to critique

    TURN OFF

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed form your favorites