کیسا تارا ٹوٹا مجھ میں

نذیر قیصر

کیسا تارا ٹوٹا مجھ میں

نذیر قیصر

MORE BYنذیر قیصر

    کیسا تارا ٹوٹا مجھ میں

    جھانک رہی ہے دنیا مجھ میں

    کوئی پرانا شہر ہے جس کا

    کھلتا ہے دروازہ مجھ میں

    دیا جلا کے چھوڑ گیا ہے

    کوئی اپنا سایا مجھ میں

    بند ہوئی جاتی ہیں آنکھیں

    کیسا منظر جاگا مجھ میں

    آوازیں دیتا ہے مجھ کو

    کوئی میرؔ کے جیسا مجھ میں

    کوئی مجھ کو ڈھونڈھنے والا

    بھول گیا ہے رستہ مجھ میں

    خالی تھی گلدان میں ٹہنی

    کھلا ہوا تھا شعلہ مجھ میں

    برس رہی تھی بارش باہر

    اور وہ بھیگ رہا تھا مجھ میں

    اڑتا رہتا ہے راتوں کو

    قیصرؔ کوئی پرندہ مجھ میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY