کیسی کیسی آیتیں مستور ہیں نقطے کے بیچ

انور مسعود

کیسی کیسی آیتیں مستور ہیں نقطے کے بیچ

انور مسعود

MORE BYانور مسعود

    کیسی کیسی آیتیں مستور ہیں نقطے کے بیچ

    کیا گھنے جنگل چھپے بیٹھے ہیں اک دانے کے بیچ

    رفتہ رفتہ رخنہ رخنہ ہو گئی مٹی کی گیند

    اب خلیجوں کے سوا کیا رہ گیا نقشے کے بیچ

    میں تو باہر کے مناظر سے ابھی فارغ نہیں

    کیا خبر ہے کون سے اسرار ہیں پردے کے بیچ

    اے دل ناداں کسی کا روٹھنا مت یاد کر

    آن ٹپکے گا کوئی آنسو بھی اس جھگڑے کے بیچ

    سارے اخباروں میں دیکھوں حال اپنے برج کا

    اب ملاقات اس سے ہوگی کون سے ہفتے کے بیچ

    میں نے انورؔ اس لیے باندھی کلائی پر گھڑی

    وقت پوچھیں گے کئی مزدور بھی رستے کے بیچ

    مآخذ :
    • کتاب : ik daraicha ik chirag (Pg. 53)
    • Author : ANWAR MASOOD
    • مطبع : Dost Publications (2008)
    • اشاعت : 2008

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY