کل چودھویں کی رات تھی شب بھر رہا چرچا ترا

ابن انشا

کل چودھویں کی رات تھی شب بھر رہا چرچا ترا

ابن انشا

MORE BYابن انشا

    کل چودھویں کی رات تھی شب بھر رہا چرچا ترا

    کچھ نے کہا یہ چاند ہے کچھ نے کہا چہرا ترا

    ہم بھی وہیں موجود تھے ہم سے بھی سب پوچھا کیے

    ہم ہنس دئیے ہم چپ رہے منظور تھا پردہ ترا

    اس شہر میں کس سے ملیں ہم سے تو چھوٹیں محفلیں

    ہر شخص تیرا نام لے ہر شخص دیوانا ترا

    کوچے کو تیرے چھوڑ کر جوگی ہی بن جائیں مگر

    جنگل ترے پربت ترے بستی تری صحرا ترا

    ہم اور رسم بندگی آشفتگی افتادگی

    احسان ہے کیا کیا ترا اے حسن بے پروا ترا

    دو اشک جانے کس لیے پلکوں پہ آ کر ٹک گئے

    الطاف کی بارش تری اکرام کا دریا ترا

    اے بے دریغ و بے اماں ہم نے کبھی کی ہے فغاں

    ہم کو تری وحشت سہی ہم کو سہی سودا ترا

    ہم پر یہ سختی کی نظر ہم ہیں فقیر رہ گزر

    رستہ کبھی روکا ترا دامن کبھی تھاما ترا

    ہاں ہاں تری صورت حسیں لیکن تو ایسا بھی نہیں

    اک شخص کے اشعار سے شہرہ ہوا کیا کیا ترا

    بے درد سننی ہو تو چل کہتا ہے کیا اچھی غزل

    عاشق ترا رسوا ترا شاعر ترا انشاؔ ترا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    غلام علی

    غلام علی

    محمد افراہیم

    محمد افراہیم

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کل چودھویں کی رات تھی شب بھر رہا چرچا ترا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY