کل وصل میں بھی نیند نہ آئی تمام شب

ممنونؔ نظام الدین

کل وصل میں بھی نیند نہ آئی تمام شب

ممنونؔ نظام الدین

MORE BYممنونؔ نظام الدین

    کل وصل میں بھی نیند نہ آئی تمام شب

    ایک ایک بات پر تھی لڑائی تمام شب

    یہ بھی ہے ظلم تو کہ اسے وصل میں رہا

    ذکر طلوع صبح جدائی تمام شب

    کس بے ادب کو عرض ہوس ہر نگہ میں تھی

    آنکھ اس نے بزم میں نہ اٹھائی تمام شب

    یاں التماس شوق وہاں احتراز ناز

    مشکل ہوئی تھی عہدہ برائی تمام شب

    کیا سر پہ کوہ کن کے ہوئی بے ستوں سے آج

    ممنوںؔ صدائے تیشہ نہ آئی تمام شب

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    کل وصل میں بھی نیند نہ آئی تمام شب فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY